Home Urdu News حکومتی ارکان کی جانب سے قومی اسمبلی کے اجلاس کو طول دینے...

حکومتی ارکان کی جانب سے قومی اسمبلی کے اجلاس کو طول دینے کی وجہ سے تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ شام 8 بجے کے بعد ہونے کا امکان ہے

0
45

 

اسلام آباد: پی ٹی آئی حکومت وزیراعظم عمران خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ سے بچنے کی کوشش کر رہی ہے، ان کی قسمت کا فیصلہ کرنے کے لیے قومی اسمبلی کا اہم اجلاس ہفتہ کی صبح ساڑھے 10 بجے شروع ہوا – اور تین وقفوں کے بعد، یہ شام 7:30 بجے (افطار کے بعد) دوبارہ شروع ہوگا۔

دریں اثنا، ذرائع نے بتایا کہ تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ شام 8 بجے کے بعد متوقع ہے۔ پہلے وقفے کے دوران – جو دو گھنٹے سے زائد جاری رہا –

اپوزیشن نے قائد حزب اختلاف شہباز شریف کے چیمبر میں مشاورتی اجلاس منعقد کیا جس میں حکومت کی جانب سے اجلاس کو طول دینے کے مبینہ منصوبے کے خلاف جوابی حکمت عملی پر غور کیا گیا تاکہ آج ووٹنگ نہ ہوسکے۔ .

جیو نیوز پر بات کرتے ہوئے سینئر اینکر پرسن حامد میر نے بتایا کہ سپیکر آفس میں ملاقات ہوئی جس میں دونوں فریقین نے وزیراعظم عمران خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ رات 8 بجے کے درمیان کرانے پر بھی اتفاق کیا۔

قومی اسمبلی کا اجلاس امجد خان نیازی کی صدارت میں شروع ہوا جب کہ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے اپنا خطاب دوبارہ شروع کیا۔

شاہ محمود قریشی کی تقریر کے دوران اپوزیشن کے احتجاج کے بعد سپیکر اسد قیصر نے اجلاس ساڑھے 12 بجے تک ملتوی کر دیا۔

اس سے قبل ذرائع نے جیو نیوز کو بتایا تھا کہ حکومت طویل تقریروں کے ذریعے اجلاس کو طول دینے اور تحریک پر ووٹنگ میں تاخیر کا منصوبہ بنا رہی ہے۔

حامد میر نے شیئر کیا کہ شاہ محمود کو وزیراعظم نے کم از کم تین گھنٹے بات کرنے کی ہدایت کی ہے۔

تاہم حکومتی اقدام کا مقابلہ کرنے کے لیے اپوزیشن سپریم کورٹ جانے پر غور کر رہی ہے اور شہباز شریف کے چیمبر میں مشاورتی اجلاس بھی ہوا۔

سپریم کورٹ نے جمعرات کو ایک تاریخی فیصلے میں قومی اسمبلی کے ڈپٹی سپیکر قاسم سوری کے فیصلے کو غیر آئینی قرار دیتے ہوئے ہدایت کی کہ تحریک پر ووٹنگ 03 اپریل کو جاری کردہ ایجنڈے کے مطابق آج ہی کرائی جائے۔

کوئی معاہدہ نہیں۔

دریں اثناء مسلم لیگ ن کی ترجمان مریم اورنگزیب نے کہا ہے کہ اپوزیشن نے حکومت کی جانب سے پیش کی گئی شرائط میں سے کسی کو تسلیم نہیں کیا اور اس بات کا اعادہ کیا کہ تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ آج ہی ہونی چاہیے۔

انہوں نے مزید کہا کہ حکومت کی کوئی شرط نہیں مانی جائے گی اور نہ ہی ووٹنگ کے لیے کوئی ٹائم فریم طے کیا گیا ہے۔

اورنگزیب نے اس بات کا بھی اعادہ کیا کہ تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ میں تاخیر سپریم کورٹ کے فیصلے اور آئین کی خلاف ورزی کے مترادف ہے، اسپیکر کو متنبہ کیا کہ اس کی سزا تین سال قید اور پانچ سال نااہلی ہے۔

NO COMMENTS

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here