Pakistan Armed forces show off military might as OIC officials on Pakistan Day

0
28
hhhh

جیسے ہی ملک بدھ کو یوم پاکستان منا رہا ہے، مسلح افواج نے اسلام آباد میں سالانہ فوجی پریڈ میں اپنی طاقت کا مظاہرہ کیا جبکہ اسلامی تعاون تنظیم (OIC) کے وزرائے خارجہ کی کونسل کے 48ویں اجلاس میں شرکت کرنے والے معززین نے بطور مہمان خصوصی شرکت کی۔

یوم پاکستان 23 مارچ 1940 کو قرارداد لاہور کی منظوری کی یاد میں منایا جاتا ہے، جب آل انڈیا مسلم لیگ نے برطانوی ہندوستانی سلطنت کے مسلمانوں کے لیے ایک علیحدہ ملک کا مطالبہ کیا تھا۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق دن کا آغاز وفاقی دارالحکومت میں 31 اور صوبائی دارالحکومتوں میں 21 بندوقوں کی حفاظت سے ہوا۔

کراچی اور لاہور میں قائد اعظم محمد علی جناح اور علامہ اقبال کے مزارات پر گارڈز کی تبدیلی کی پروقار تقریب بھی منعقد ہوئی۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا کہ مساجد میں نماز فجر کے بعد پاکستان کی ترقی اور خوشحالی کے لیے خصوصی دعائیں کی گئیں۔

اس دن کی اہم خصوصیت اسلام آباد میں عظیم الشان فوجی پریڈ تھی جس میں مسلح افواج اور دیگر سیکیورٹی فورسز کے تینوں دستوں نے مارچ کیا جب کہ لڑاکا طیاروں نے فضائی مشقیں پیش کیں۔

پریڈ میں آذربائیجان، ازبکستان، ترکی، مملکت سعودی عرب اور بحرین سمیت دیگر ممالک کے دستوں نے بھی شرکت کی۔

وزیراعظم عمران خان، صدر مملکت عارف علوی، تینوں مسلح افواج کے سربراہان، وفاقی وزراء کے علاوہ او آئی سی کے رکن 57 مسلم ممالک کے حکام اور وزرائے خارجہ نے نمائش میں شرکت کی۔

پی اے ایف فائٹرز کے دلکش شو کے بعد پاکستان آرمی، پی اے ایف اور نیوی کے پیرا شوٹرز نے 10,000 فٹ کی بلندی سے فری فالز کے ساتھ اپنی مہارت کا مظاہرہ کیا۔ میجر جنرل عادل رحمانی، سپیشل سروس گروپ (SSG) کے جنرل آفیسر کمانڈنگ (GOC) – فوج کے کمانڈوز کی ایلیٹ یونٹ – نے صدر علوی کو پاکستان کا جھنڈا پیش کیا، جس کے بعد پیرا شوٹرز کو توپوں کی سلامی دی گئی۔

مظاہرے کے بعد ہر صوبے کی نمائندگی کرنے والے فلوٹس نے پنڈال کا چکر لگایا۔ اس سال پہلی بار جموں و کشمیر کی طرف سے بھی پریزنٹیشن دی گئی۔ اس خطے کے فلوٹ میں سری نگر میں واقع مشہور درگاہ حضرت بل کا ایک چھوٹا سا ڈھانچہ دکھایا گیا ہے۔ اس میں بھارتی مقبوضہ کشمیر میں شہید ہونے والے آزادی پسندوں کے بینرز بھی اٹھا رکھے تھے۔

اس موقع پر اپنے خطاب میں صدر علوی نے کہا کہ پاکستان ایک ذمہ دار ایٹمی طاقت ہے جو دیگر تمام اقوام کے ساتھ امن چاہتا ہے اور ان کی خودمختاری کا احترام کرتا ہے۔

انہوں نے واضح کیا کہ پاکستان اپنی سلامتی اور خودمختاری پر کبھی سمجھوتہ نہیں کرے گا اور کسی بھی جارحیت کا منہ توڑ جواب دے گا۔ علوی نے مزید کہا، “مجھے یقین ہے کہ ہماری قوم ملکی سلامتی کے لیے کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کرے گی۔

صدر نے انتہا پسندی اور جعلی خبروں کے پھیلاؤ کو معاشرے کو درپیش سب سے بڑے چیلنجز کے طور پر اجاگر کیا اور اسکالرز، والدین اور اساتذہ پر زور دیا کہ وہ ان معاشرتی مسائل سے نمٹنے میں اپنا کردار ادا کریں۔

یوم پاکستان کی تاریخی اہمیت کو اجاگر کرنے کے لیے متعدد تنظیموں اور محکموں نے سیمینارز، کانفرنسز اور مباحثے کے پروگراموں سمیت متعدد سرگرمیوں کا منصوبہ بنایا ہے۔

‘محنت، ایمانداری اور اخلاقیات’

قوم کے نام اپنے پیغام میں وزیراعظم عمران خان نے زور دیا کہ ملک ایک طویل جمہوری جدوجہد کے بعد معرض وجود میں آیا اور اس کی ترقی کی کنجی “محنت، ایمانداری اور اخلاقیات” میں ہے۔

“ہمیں قائداعظم محمد علی جناح کے دیے گئے اتحاد، ایمان اور نظم و ضبط کے اصولوں پر عمل پیرا ہونے کی ضرورت ہے اور پاکستان کو ریاست مدینہ کے ماڈل پر ایک حقیقی جمہوری فلاحی ریاست کے طور پر تیار کرنے کے لیے اپنے آپ کو نئے سرے سے وقف کرنا ہوگا۔ بحیثیت قوم ہمیں درپیش چیلنجوں پر غور کرنا مناسب ہے،‘‘ انہوں نے کہا۔

وزیر اعظم نے مزید کہا کہ ان کی حکومت غربت کے خاتمے اور انصاف کو فروغ دینے کے لیے طویل المدتی اصلاحات اور اقدامات لائی ہے اور اس کی توجہ معاشرے کے پسماندہ طبقات اور انہیں مساوی مواقع فراہم کرنے پر مرکوز ہے۔

“اب ہم اپنی ماضی کی عظمت کو دوبارہ حاصل کرنے کی راہ پر گامزن ہیں جو کہ سابقہ ​​حکومتوں نے تباہ کر دی تھی جنہوں نے قومی مفاد اور عوام کی فلاح و بہبود کی بجائے اپنے مفادات کو اہمیت دی۔

وزیر اعظم نے کہا کہ بدعنوانی کے خاتمے اور اخلاقی معیار کو بہتر بنانے کے لیے اسی طرح استقامت کی ضرورت ہوگی جس طرح ہمارے بانیوں نے تحریک آزادی کے دوران ثابت قدمی کی تھی۔

Previous article10 Reasons You Should Do Yoga Every day!
Next articleEthereum Co-founder Vitalik Buterin Warns Of Cryptocurrency’s Dystopian Potential

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here