Electricity crisis worsens as shortfall hits 7,468MW

0
21

شارٹ فال 7 ہزار 468 میگاواٹ تک پہنچنے سے بجلی کا بحران شدت اختیار کر گیا۔

اس وقت بجلی کی کل پیداوار 18,031 میگاواٹ ہے جب کہ ملک میں طلب 25,500 میگاواٹ کے قریب ہے۔

لاہور: درجہ حرارت میں اضافے کے بعد ملک میں توانائی کا بحران شدت اختیار کر گیا، پیر کو بجلی کا شارٹ فال 7 ہزار 468 میگاواٹ تک پہنچ گیا، جس کے نتیجے میں ملک میں 10 سے 18 گھنٹے تک لوڈشیڈنگ کی گئی۔

پاور پلانٹس کی بندش کو ایندھن کی کمی اور بجلی کی پیداوار میں کمی کی تکنیکی وجوہات قرار دیا جا رہا ہے۔
اس وقت بجلی کی کل پیداوار 18,031 میگاواٹ ہے جبکہ طلب 25,500 میگاواٹ کے قریب ہے۔

پن بجلی سے 3674 میگاواٹ بجلی پیدا کی جا رہی ہے جبکہ سرکاری تھرمل پاور پلانٹس جو کہ اس وقت صرف 786 میگاواٹ بجلی پیدا کر رہے ہیں۔
اس کے برعکس پرائیویٹ پاور پروڈیوسرز 9,526 میگاواٹ بجلی فراہم کر رہے ہیں۔

ذرائع نے بتایا کہ ونڈ پاور پلانٹس 487 میگاواٹ، سولر 104 میگاواٹ، بائیو گیس 141 میگاواٹ اور اٹامک پاور پلانٹس اس وقت 3312 میگاواٹ بجلی پیدا کررہے ہیں۔
طویل اور غیر اعلانیہ بندش نے معمولات زندگی کو بری طرح متاثر کیا ہے۔ راولپنڈی کی رہائشی ریحانہ جدون نے شہر میں غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ کا سلسلہ جاری رکھنے کی مذمت کی۔

گوجرانوالہ کے زبیر احمد نے کہا کہ انہوں نے مقدس مہینے میں ایسا نہیں سوچا۔ “میں صورتحال کو نہیں سمجھتا ہوں۔ پندرہ دن پہلے نہ لوڈشیڈنگ تھی اور نہ ڈیزل کی کمی تھی۔
اب کہاں گیا؟ کوئی جانتا ہے؟‘‘ اس نے پوچھ
کراچی کے ایک رہائشی محمد حنیف خان نے بتایا کہ نیشنل گرڈ سے کم سپلائی کی وجہ سے ان کے علاقے میں لوڈ مینجمنٹ کی گئی۔

اس لیے ان کے علاقے میں کم از کم چار گھنٹے کی بندش کی جا رہی ہے۔
پاور ڈویژن کے حکام کے مطابق ملک میں شہری مراکز میں لوگوں کو دن میں 10 گھنٹے اور دیہی علاقوں میں 18 گھنٹے تک بجلی کی بندش کا سامنا ہے۔
افطاری اور سحری کے اوقات میں بجلی کی بندش نے لوگوں کا جینا محال کر دیا۔ پیر کو توانائی کے طویل بحران پر الزام تراشی کا کھیل جاری رہا

وزیر اعظم شہباز شریف نے کہا کہ میاں نواز شریف کی حکومت نے پانچ سالوں میں بدترین لوڈشیڈنگ کا خاتمہ کیا۔ انہوں نے ملک میں شدید لوڈشیڈنگ کا ذمہ دار عمران خان کی سابقہ ​​حکومت کی توانائی پالیسیوں کو قرار دیا۔

ایک ٹویٹ میں انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی حکومت اپنے دور میں بجلی کی پیداوار کے مسئلے کو حل کرنے میں ناکام رہی۔
انہوں نے مزید کہا کہ ‘پی ٹی آئی حکومت نے نہ تو بروقت ایندھن خریدا اور نہ ہی پاور پلانٹس کی مرمت کی، اس لیے موجودہ لوڈشیڈنگ ہے’۔

انہوں نے الزام لگایا کہ پی ٹی آئی حکومت کی جانب سے ناکارہ پلانٹس کے ذریعے مہنگی بجلی پیدا کرنے سے قوم کو ماہانہ 100 ارب روپے کا نقصان ہورہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان کی حکومت لوڈ شیڈنگ کے مسئلے کو حل کرنے کے لیے کوششیں کر رہی ہے
تاہم سابق وزیر توانائی حماد اظہر نے وزیر اعظم شہباز شریف کے دعوؤں کو مسترد کر دیا۔ انہوں نے کہا کہ درآمدی حکومت کی نااہلی کی وجہ سے ملک کو لوڈ شیڈنگ اور ڈیزل کی عدم دستیابی کا سامنا ہے۔ بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت موجود ہے لیکن موجودہ حکومت اس سے استفادہ نہیں کر سکی۔
ڈیزل کا سب سے زیادہ اسٹاک دستیاب ہے لیکن قیمت میں ابہام پیدا کرکے ذخیرہ اندوزی شروع کردی گئی۔

حماد اظہر نے مزید کہا کہ موجودہ حکومت نے انتہائی غیر یقینی کی صورتحال پیدا کرکے معاشی بحران پیدا کیا۔ بے وقت انتظامیہ کے باعث لوڈ شیڈنگ کا بحران پیدا ہو گیا۔ یہ ملک صرف حکومت کے نیلی آنکھوں والے نجی نیوز چینلز پر اچھا کام کر رہا ہے۔
دوسری صورت میں چیزیں بہت خراب ہیں. انہوں نے کہا کہ صرف پانچ پاور پلانٹس زیر مرمت ہیں اور ان میں سے زیادہ تر نجی شعبے کے ہیں۔
انہوں نے دعویٰ کیا کہ “پی ایم ایل این کے ایل این جی کے دو معاہدوں کی وجہ سے ایندھن کی قلت پیدا ہوئی، اور گزشتہ دو ہفتوں میں گیس کے نظام پر فوری ڈائیورژن نہیں کیا گیا”۔ “یہ ایک کلاسک بدانتظامی کا مسئلہ ہے جس سے آسانی سے بچا جا سکتا تھا،” انہوں نے مزید کہا۔

انہوں نے کہا کہ ملک میں بجلی کا بحران ایک بار پھر سنگین ہو گیا ہے۔ صرف ایک دن میں شارٹ فال ڈھائی گنا اضافے کے ساتھ 7500 میگاواٹ تک پہنچ گیا۔ کئی شہروں میں 10 سے 18 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ۔

حماد اظہر نے کہا کہ بجلی کی لوڈشیڈنگ شروع ہو گئی ہے اور دیہی علاقوں میں ڈیزل کی قلت کی اطلاعات ہیں۔ امپورٹڈ حکومت کے ساتھ معاملات بالکل ہینڈل نہیں ہو رہے۔
اس کے علاوہ درآمدی حکومت نے آئی ایم ایف سے وعدہ کیا ہے کہ وہ پیٹرول، ڈیزل اور بجلی کی قیمتوں میں اضافہ کرے گی۔
اس سے معیشت کو شدید دھچکا لگے گا اور شرح نمو پر منفی اثرات مرتب ہوں گے۔ سابق وزیر پاور اور پی ایم ایل این رہنما عابد شیر علی نے مشاہدہ کیا کہ نواز شریف کی حکومت نے 12 ہزار اضافی بجلی پیدا کی۔
اس کے باوجود پی ٹی آئی کی حکومت نے اپنی بدانتظامی اور نااہلی سے یہ مسئلہ دوبارہ کھڑا کر دیا۔ انہوں نے کہا کہ آج تیل اور گیس کی عدم خریداری کی وجہ سے 5000 میگاواٹ سے زائد کا شارٹ فال ہے۔

Previous articleGamma-ray telescopes may help scientists to catch more gravitational waves
Next articleLongest Rivers In The World

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here