استعفوں پر پی ٹی آئی تقسیم

0
65

استعفوں پر پی ٹی آئی تقسیم

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی پارلیمانی پارٹی کو قومی اسمبلی سے استعفوں کے معاملے پر اتوار کو تقسیم کا سامنا کرنا پڑا۔

فواد چوہدری اور شیخ رشید احمد نے کہا کہ پارٹی کے ارکان پارلیمنٹ پیر کو وزیراعظم کے انتخاب کے بعد اجتماعی طور پر مستعفی ہو جائیں گے، شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ابھی تک کوئی حتمی فیصلہ نہیں ہوا جبکہ علی محمد خان نے کہاکہ پارٹی کے تقریباً 95 فیصد ایم این ایز مخالف ہیں۔

اسمبلیاں چھوڑنا۔

پی ٹی آئی ذرائع کا کہنا ہے کہ شیخ رشید اور فواد چوہدری پی ٹی آئی کو سیاسی منظر نامے سے باہر کرنے کے لیے سرگرم ہیں۔ دونوں عمران خان پر اسمبلیوں سے مستعفی ہونے کے لیے دباؤ ڈال رہے ہیں۔

ان کا ماننا ہے کہ اگر پی ٹی آئی کے ایم این ایز بڑے پیمانے پر استعفے دے دیتے ہیں تو شہباز شریف کی قیادت میں نئی ​​حکومت کو اہم تقرریوں اور قانون سازی پر کھل کر کھیلنے کا موقع ملے گا۔ ان کا خیال ہے کہ ایسے حالات میں پارٹی کو ناقابل تلافی نقصان پہنچے گا۔

چوہدری فواد حسین نے اتوار کو بنی گالہ میں پارٹی چیئرمین عمران خان کی زیر صدارت پی ٹی آئی کور کمیٹی کے اجلاس کے بارے میں میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ پی ٹی آئی کے ایم این ایز پیر سے قومی اسمبلی سے استعفیٰ دینا شروع کر دیں گے۔

فواد نے کہا کہ اگر شہباز شریف کے کاغذات پر ہمارے اعتراضات منظور نہ ہوئے تو کل استعفیٰ دے دیں گے۔

عمران خان نے پی ٹی آئی کی کور کمیٹی کے اجلاس کی صدارت کی جس میں تازہ ترین سیاسی صورتحال کا جائزہ لیا گیا اور قبل از وقت انتخابات کرانے اور نئی حکومت کی تشکیل کو روکنے کے آپشنز پر غور کیا گیا۔

مبینہ طور پر عمران خان اگلے چند ہفتوں یا مہینوں میں ملک میں عام انتخابات کے مطالبے کے لیے ایک بڑی تحریک کی قیادت کرنے کے لیے تیار ہیں۔

پارٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ سابق وزیراعظم کے پیر (آج) کو ایوان کی کارروائی میں شرکت کا امکان ہے۔

عدم اعتماد کی قرارداد کے ذریعے بطور وزیر اعظم ان کی برطرفی کے بعد یہ ان کا پہلا دورہ ہوگا۔

Previous articlePTI city to city demonstrations, thanks for expressing emotions said Imran Khan
Next articleشہباز شریف پاکستان کے وزیراعظم منتخب ہوئے

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here